Verses

سنا کرو مری جاں اِن سے اُن سے افسانے
سب اجنبی ہیں یہاں کون کس کو پہچانے

یہاں سے جلد گزر جاؤ قافلے والو !
ہیں میری پیاس کے پھونکے ہوئے یہ ویرانے

مرے جنونِ پرستش سے تنگ آ گئے لوگ
سنا ہے بند کئے جا رہے ہیں بت خانے

جہاں سے پچھلے پہر کوئی تشنہ کام اٹھا
وہیں پہ توڑے ہیں یاروں نے آج پیمانے

بہار آئے تو میرا سلام کہہ دینا
مجھے تو آج طلب کر لیا ہے صحرا نے

ہوا ہے حکم کہ کیفی کو سنگسار کرو
مسیح بیٹھے ہیں چھپ کے کہاں خدا جانے

Author

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer