عجب حادثہ

Verses

عجب حادثہ
---------------
حوادث کی بھیڑ میں،
اس اجڑے گلستاں میں، کبھی کلیاں نو بہار تھیں
لیکن اب کے ساون اور برکھا کی ہواوں نے کچھ ایسا اثر دکھایا
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھلکھلاتے گلستان گلاب کی سرخ پتیاں ،
زمیں پہ بکھری لاشوں کے مصداق ،
خونی مناظر کی طرح،
باغ کے مالی کو پیغام دے رہی ہیں
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیز ہوائیں جھنجھوڑ دیتی ہیں اور اکثر کایا پلٹ کہ رکھ دیتی ہیں ،
لیکن ہماری ان مذکورہ سرخ پتیوں کا رس ،
اسی خمیر میں شہیدان وطن کی طرح جذب ہو کر رہ جائے گا،
اور
امید واثق ہے کہ ساون کہ اس کہر آلود اور برکھا کی شدت کی ہواوں کے بعد،
اس گلشن میں جو نئے گلاب کھلیں گے ان کے عرق میں ہماری لال پتیوں کا رس ہو گا،
اور اب کے بہار جو پھول کھلیں گے وہ زیادہ جاذب نظر ہوں گے،

شکیل چوھان آزادکشمیر

آگ بھڑک اٹھتی ہے

Verses

آگ بھڑک اٹھتی ہے
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

آگ بھڑک اٹھتی ہے،
جب ہوائیں تیز ہوتی ہیں

لیکن

یہ آگ اس وقت بہت خطرناک ہو جاتی ہے،
جب
اس میں موجود چھوٹی چنگاریاں،
تیز ہوا کے ساتھ
کسی
عالی شان محل
یا پھر کسی غریب کی کٹیا میں داخل ہوتی ہیں
اور
پل بھر میں اس کو مسمار کر کے رککھ دیتی ہیں

(شکیل اے چوھان(

مہرباں دوستوں کی عنائیتیں و نوازشیں

Verses

مہرباں دوستوں کی عنائیتیں و نوازشیں
سرمایہ حیات ہیں میرے لئیے

انکے میٹھے بول کانوں میں اب بھی رس گھو ہیں
نہ جانے کس دشمن کی نظر ہوئی ہماری دوستی کو
کہ دوست دوست نہ رہا
گھر گھر نہ رہا
بہن بہن نہ رہی
بھائی بھائی نہ رہا

سنو اے سماج کے ظالمو!
ان رشتوں کو نہیں توڑتے
تمھیں کیا خبر کہ تمھاری یہ موجودہ لغزشیں
کسی مخلص پر ایک توپ کی مانند گرتی ہیں

رشتوں کو نہیں توڑتے
گھر نہیں چھوڑتے
بناوٹی باتوں میں آکر تم حقائق کو نہ بھولو
یہ دنیا تم پر ہنسے گی سنو اے دوستو
واپس لوٹ آو، اور بزم سجا لو دلوں کی
سنو! پھر سنو!
اسکے بعد آواز نہیں دیجائے گی ، اس سے قبل کہ
یہ روح جس کے تم دشمن ہو پرواز کر جائے
واپس لوٹ آو

نئے عزائم پیدا کریں ، تمام نفرتیں دور کریں
شکستہ دلوں کی دیواروں کو پھر سے جوڑیں
سنو تم لوٹ آو، سنو بہنو یہ ناراضگی المیہ ہے

سنو لوٹ آو
کہ تمھارے ساتھ گزارے چند دن میرے لئیے
مشعل راہ ہیں ، روشنی ہیں ، سہارا ہیں
لوٹ آو ، میری فیملی کے دوستو لوٹ آو

شکیل اے چوھان ( نثری نظم)

دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے،

Verses

دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے،
ابر آلود موسموں میں
جب ہم خیال کرتے ہیں
کہ
بارش ہونے والی ہے ،
لیکن
اکثر بادل گرج چمک کے بعد
خاموشی اختیار کر لیتا ہے
اور
پھر یوں بارش نہیں ہوتی
لیکن
اگر اس ابر آلود موسم میں کبھی بارش ہو جائے
تو
وہ بارش اکثر تھم کر نہیں برستی،
وہ بارش کچی جھونپڑیوں کا خیال نہیں رکھتی
اور
ہم پھر ایک نئ پر امید صبح کی تلاش میں سرگرداں ہوتے ہیں
کہ
شاید
آنے والی کل کا موسم ایک خوشگوار موسم ہو
لیکن
اب کی بار ابر آلود موسم کی بارشیں شاید ہمارے دلوں کے گھروں کو بھی پہنچیں
اور
جیسے خزاں رسید پتے بارش کے بعد اکثر ہرے ہو جاتے ہیں
تو
میرا خیال ہے کہ یہ بارش موسم کا خیال رکھے گی،
کیونکہ
دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے

تجھے میںکیا لکھوں:

Verses

تجھے میں کیا لکھوں
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
تجھے میں کیا لکھوں ،تیرے نام میں کیا پیام لکھوں
مجھے
کچھ سمجھ نہیں آتی کہ اے محبوب میں تجھے کیا لکھوں
کیونکہ
تو حسن پیکر ، پارسا سیرت و کردار ہے
تو
چلو
میں تمھیں زندگی کی کتاب لکھ دیتا ہوں
لیکن
تمھیں تو سب خبر ہے اے جان تمنا!
کہ
میری یہ کتاب کوئی اور نہیں پڑھے گا
جب
میری روح پرواز کر جائے گی
تو میرے تمام احباب
میری یہ تخلیق دیکھیں گے
اور
میری تمام تخلیقات میں صرف تمھارا ہی نام ہو گا
اور اس کتاب کو میں تمھارے نام منسوب کروں گا
تو وہ احباب جو عزیز جاں تھے
میری اس کتاب
میں کوئی دلچسپی نہیں لیں گے
کیونکہ
میری کسی تخلیق میں تمھارے سوا کسی کا نام نہیں ہو گا
اور شہرت کے دلدادہ میرے تمام احباب
اس کتاب کی ورق گردانی کرنے کے بعد
اس
کتاب کو الٹا کر کے رکھ دیں گے
لیکن
تمھارے لئیے یہ کتاب بہت معنی خیز رہے گی
اور تم اکثر خزاں رتوں میں اس کا مطالعہ کرتے رہو گے
اور ایک بے نام سے بندھن کی کیفیات کی طرح
کسی
عاشق خاص کی طرح مجھے یاد کرو گے
اور میری تمام تحریریں جو بہار اور خزاں رتوں میں
میں
نے تمھارے نام رقم کی تھیں
ان سے اپنے آپ کو بہلاو گئے
اور
میری روح کو قرار آ جائے گا ، میری تحریر تمھیں اپنے حصار میں رکھے گی
اور اس حصار میں تم حسن کردار سے
اپنے آنے والے کل کے لئیے سوچو گئے
تو میری کتاب کی تکمیل ہو گی۔

شکیل اے چوھان

ایسی تجلی پڑ جائے جو جلا کر بھسم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Verses

ایسی تجلی پڑ جائے جو جلا کر بھسم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے جذبات نہ رہیں باقی میری ذات کو ختم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے چاہیے وہ جذبہ جس میں شامل ہو تیرا جلوہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا وجود مٹا دے مجھے عدم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ کائنات رنگ و بو جس میں رچی ہو تیری خوشبو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے یہی میری آرزو کے مجھے اس میں ضم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا کام ہو صبح شام پڑھتا رہوں تیرا کلام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو ورد زباں تیرا نام کوئی چائے سر بھی قلم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشکل ہو کیونکر قطعی ممکن ہے شکیل تیرے لئیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرا مالک مولا اگر تجھ پہ کرم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌ شکیل احمد چوھان
تحریر: 03/10/11

خزاں رت اور یہ شوخیاں عجب لگتی ہیں

Verses

خزاں رت اور یہ شوخیاں عجب لگتی ہیں
جاناں تمھارے چہرے کی پرچھائیاں عجب لگتی ہیں

جب بھی زرد پتوں کو دیکھا تو یہ احساس ہوا
گزرے بہار کی گلاب رتیں عجب لگتی ہیں

اپنے حال میں مست ہے پھر بھی پرانا شجر!
کچھ نرم و نازک ٹہنیاں عجب عجب لگتی ہیں

نیا زمانہ پھر ابر بہار بن کر آئے گا میرے آنگن میں
اس حال میں رقیبوں کی باتیں عجب لگتی ہیں

شکیل احمد چوھان

دل کی بستی

Verses

میرے دل کی ویران بستی اکثر مجھ سے پوچھتی رہتی ہے
رہتے ہیں کس دیس میں وہ لوگ جو کبھی آئے تھے یہاں

شکیل احمد چوھان

اداس رات

Verses

اداسیوں کی اس گھناونی رات میں ،
میں جو چاند کو دیر تک تکوں
تو اس میں برا کیا ہے

سارے عہد و پیماں جھوٹے، سب رنگ راگ جھوٹے
لمحہ بھر کے لئیے جو تیری گلی میں ٹھہر گئے
تو اس میں برا کیا ہے۔

شکیل احمد چوھان

محبتوں کا امیں تھا میرا شہر

Verses

محبتوں کا امیں تھا میرا شہر
دلکش و حسیں تھا میرا شہر

گہوارہ تھا یہ علم و ادب کا
مقدس سر زمیں تھا میرا شہر

من کو بہاتے پر فریب نظارے
بہت دلنشیں تھا میرا شہر

نظرآ رہا ہے جو خون بنا ہوا
ایسا تو نہیں تھا میرا شہر

بھول نہ پاوں گا شکیل رونق شہر کی
دل میں جاگزیں تھا میرا شہر

شکیل احمد چوھان

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer