کچھ روز میں اس خاک کے پردے میں رہوں گا

Verses

کچھ روز میں اس خاک کے پردے میں رہوں گا
پھر دُور کسی نور کے ہالے میں رہوں گا

رکھوں گا کبھی دھوپ کی چوٹی پہ رہائش
پانی کی طرح ابر کے ٹکڑے میں رہوں گا

یہ شب بھی گزر جائے گی تاروں سے بچھڑ کر
یہ شب بھی میں کہسار کے درے میں رہوں گا

سورج کی طرح موت مرے سر پہ رہے گی
میں شام تلک جان کے خطرے میں رہوں گا

اُبھرے گی مرے ذہن کے خلیوں سے نئی شکل
کب تک میں کسی برف کے ملبے میں رہوں گا

RAFIQ SANDEELVI

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer