رخشندہ نوید

دل کے اِک اِک شوق پر قربان تھا، وہ بھی گیا

Verses

دل کے اِک اِک شوق پر قربان تھا، وہ بھی گیا
وہ بھی مجھ جیسا الگ انسان تھا، وہ بھی گیا

پتی پتی غنچۂ الفت بکھر جانے کے بعد
باقیاتِ ربط میں اِک مان تھا، وہ بھی گیا

جاتے جاتے لے اڑی اطراف سے خوشبو ہوا
گھر سجانے لینے کا کچھ سامان تھا، وہ بھی گیا

خود سمندر میں ڈبو دیں کاغذوں کی کشتیاں
پار لگنے کا جو اِک امکان تھا، وہ بھی گیا

اب بچا کر خود کو کیا کرنا ہے رخشندہ تمہیں
وہ جو تیرے حوصلوں کی جان تھا، وہ بھی گیا

رخشندہ نوید

ghazal

Verses

nay kam ki ibtda kr raha ho
fareza main apna ada kr raha ho

huda wand e alam mujhy b sila dy
yahi hr ghari main dua kr raha ho

mujhy tu bura na smj meray hamdam
main larayb teri sna kr raha ho

dastor e zamana hy mil kr bicharna
bichar kr b tuj sy wafa kr raha ho
poet
ghulam awais ghulam
03456945898

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer