حدیثِ عشق بھلا کیا کرے بیاں کوئی

Verses

حدیثِ عشق بھلا کیا کرے بیاں کوئی
نہیں فسانہ ء الفت کا رازداں کوئی
تڑپ سے برق کی ہوتا ہے صاف اب ظاہر
بنا ہے آج گلستاں میں آشیاں کوئی
مدھر سروں میں سنو آبشار کا نغمہ
سنا رہا ہے محبت کی داستاں کوئی
قفس میں بلبلِ شیریں نوا رہے کیونکر؟
نہ ہم سخن ہے وہاں اور نہ ہم زباں کوئی
گراں خزانہ ء خسرو سے جذبہ ء الفت
نہ اس سے بڑھ کے ملا گنجِ شائیگاں کوئی
جہاں پہ ہو نہ سکی حکم راں کبھی ظلمت
سیاہ رات میں اختر ہے ضوفشاں کوئی
چمن میں روز ہے کثرت سے آمدِ گل چیں
یہاں تو شاذ ہی آتا ہے باغ باں کوئی
جہاں میں آج بھی ہے راہِ کہکشاں موجود
نہ گامزن ہے مگر اس پہ کارواں کوئی
سنے جو پھولؔ کے اشعار، بول اٹھے غنچے
ہوا پھر آج ہے گلشن میں نغمہ خواں کوئی
(تنویرپھولؔ کے مجموعہ ء کلام "دھواں دھواں چہرے"مطبوعہ اپریل 1999 ء سے ماخوذ

عجب حادثہ

Verses

عجب حادثہ
---------------
حوادث کی بھیڑ میں،
اس اجڑے گلستاں میں، کبھی کلیاں نو بہار تھیں
لیکن اب کے ساون اور برکھا کی ہواوں نے کچھ ایسا اثر دکھایا
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھلکھلاتے گلستان گلاب کی سرخ پتیاں ،
زمیں پہ بکھری لاشوں کے مصداق ،
خونی مناظر کی طرح،
باغ کے مالی کو پیغام دے رہی ہیں
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیز ہوائیں جھنجھوڑ دیتی ہیں اور اکثر کایا پلٹ کہ رکھ دیتی ہیں ،
لیکن ہماری ان مذکورہ سرخ پتیوں کا رس ،
اسی خمیر میں شہیدان وطن کی طرح جذب ہو کر رہ جائے گا،
اور
امید واثق ہے کہ ساون کہ اس کہر آلود اور برکھا کی شدت کی ہواوں کے بعد،
اس گلشن میں جو نئے گلاب کھلیں گے ان کے عرق میں ہماری لال پتیوں کا رس ہو گا،
اور اب کے بہار جو پھول کھلیں گے وہ زیادہ جاذب نظر ہوں گے،

شکیل چوھان آزادکشمیر

chaa.Ndanii ko rusuul kahataa huu.N/saghir siddiqui

Verses

chaa.Ndanii ko rusuul kahataa huu.N
baat ko baa_usuul kahataa huu.N

jagamagaate hue sitaaro.n ko
tere pairo.n kii dhuul kahataa huu.N

jo chaman kii hayaat ko Das le
us kalii ko babuul kahataa huu.N

ittefaaqan tumhaare milane ko
zindagii kaa husuul kahataa huu.N

aap kii saa.Nvalii sii suurat ko
zauq-e-yazdaa.N kii bhuul kahataa huu.N

jab mayassar ho saaGar-o-miinaa
barq_paaro.n ko phuul kahataa huu.N

bhuulii hu_ii sadaa huu.N mujhe yaad kiijiye /saghar siddiqui

Verses

bhuulii hu_ii sadaa huu.N mujhe yaad kiijiye
tum se kahii.n milaa huu.N mujhe yaad kiijiye

ma.nzil nahii.n huu.N Khizr nahii.n rahazan nahii.n
ma.nzil kaa ra.ntaa huu.N mujhe yaad kiijiye

merii nigaah-e-shauq se har gul hai devataa
mai.n ishq kaa Khudaa huu.N mujhe yaad kiijiye

naGmo.n kii ibtidaa thii kabhii mere naam se
ashko.n kii i.ntahaa huu.N mujhe yaad kiijiye

gum-sum kha.Dii hai.n dono.n jahaan kii haqiiqate.n
mai.n un se kah rahaa huu.N mujhe yaad kiijiye

"Sagar" kisii ke husn-e-taGaaful shaar kii
bahakii hu_ii adaa huu.N mujhe yaad kiijiye

bargashtaa-e-yazdaa.N se kuchh bhuul hu_ii hai/saghar siddiqui

Verses

bargashtaa-e-yazdaa.N se kuchh bhuul hu_ii hai
bhaTake hue insaan se kuchh bhuul hu_ii hai

taa hadd-e-nazar shole hii shole hai.n chaman me.n
phuulo.n ke nigeh_baan se kuchh bhuul hu_ii hai

jis ahad me.n luT jaaye faqiiro.n kii kamaa_ii
us ahad ke sultaan se kuchh bhuul hu_ii hai

ha.NSate hai.n merii suurat-e-maftuu.N pe shaguufe
mere dil-e-naadaan se kuchh bhuul hu_ii hai

huuro.n kii talab aur mai-o-saaGar se hai nafrat
zaahid tere irfaan se kuchh bhuul hu_ii hai

baat phuulo.n kii sunaa karate the /saghar siddiqui

Verses

baat phuulo.n kii sunaa karate the
ham kabhii sher kahaa karate the

mashaale.n leke tumhaare Gam kii
ham andhero.n me.n chalaa karate the

ab kahaa.N aisii tabiyat vaale
choT khaa kar jo duaa karate the

tark-e-ehasaas-e-muhabbat mushkil
haa.N magar ahal-e-vafaa karate the

bikharii bikharii zulfo.n vaale
qaafile rok liyaa karate the

aaj gulshan me.n shaguuf-e-saaGar
shikave baad-e-sabaa se karate the

azmat-e-zindagii ko bech diyaa/saghar siddiqui

Verses

azmat-e-zindagii ko bech diyaa
ham ne apanii Khushii ko bech diyaa

chashm-e-saaqii ke ik ishaare pe
umr kii tishnagi ko bech diyaa

rind jaam-o-subuu pe ha.Nsate hai.n
shaiKh ne bandagii ko bech diyaa

rah_guzaaro.n pe luT ga_ii raadhaa
shaam ne baa.Nsurii ko bech diyaa

jagamagaate hai.n vahashato.n ke dayaar
aql ne aadamii ko bech diyaa

lab-o-ruKhsaar ke ivaz ham ne
sitvat-e-Khusravii ko bech diyaa

ishq beharuupiyaa hai ai 'Sagar'
aap ne saadagii ko bech diyaa

آگ بھڑک اٹھتی ہے

Verses

آگ بھڑک اٹھتی ہے
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

آگ بھڑک اٹھتی ہے،
جب ہوائیں تیز ہوتی ہیں

لیکن

یہ آگ اس وقت بہت خطرناک ہو جاتی ہے،
جب
اس میں موجود چھوٹی چنگاریاں،
تیز ہوا کے ساتھ
کسی
عالی شان محل
یا پھر کسی غریب کی کٹیا میں داخل ہوتی ہیں
اور
پل بھر میں اس کو مسمار کر کے رککھ دیتی ہیں

(شکیل اے چوھان(

مہرباں دوستوں کی عنائیتیں و نوازشیں

Verses

مہرباں دوستوں کی عنائیتیں و نوازشیں
سرمایہ حیات ہیں میرے لئیے

انکے میٹھے بول کانوں میں اب بھی رس گھو ہیں
نہ جانے کس دشمن کی نظر ہوئی ہماری دوستی کو
کہ دوست دوست نہ رہا
گھر گھر نہ رہا
بہن بہن نہ رہی
بھائی بھائی نہ رہا

سنو اے سماج کے ظالمو!
ان رشتوں کو نہیں توڑتے
تمھیں کیا خبر کہ تمھاری یہ موجودہ لغزشیں
کسی مخلص پر ایک توپ کی مانند گرتی ہیں

رشتوں کو نہیں توڑتے
گھر نہیں چھوڑتے
بناوٹی باتوں میں آکر تم حقائق کو نہ بھولو
یہ دنیا تم پر ہنسے گی سنو اے دوستو
واپس لوٹ آو، اور بزم سجا لو دلوں کی
سنو! پھر سنو!
اسکے بعد آواز نہیں دیجائے گی ، اس سے قبل کہ
یہ روح جس کے تم دشمن ہو پرواز کر جائے
واپس لوٹ آو

نئے عزائم پیدا کریں ، تمام نفرتیں دور کریں
شکستہ دلوں کی دیواروں کو پھر سے جوڑیں
سنو تم لوٹ آو، سنو بہنو یہ ناراضگی المیہ ہے

سنو لوٹ آو
کہ تمھارے ساتھ گزارے چند دن میرے لئیے
مشعل راہ ہیں ، روشنی ہیں ، سہارا ہیں
لوٹ آو ، میری فیملی کے دوستو لوٹ آو

شکیل اے چوھان ( نثری نظم)

دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے،

Verses

دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے،
ابر آلود موسموں میں
جب ہم خیال کرتے ہیں
کہ
بارش ہونے والی ہے ،
لیکن
اکثر بادل گرج چمک کے بعد
خاموشی اختیار کر لیتا ہے
اور
پھر یوں بارش نہیں ہوتی
لیکن
اگر اس ابر آلود موسم میں کبھی بارش ہو جائے
تو
وہ بارش اکثر تھم کر نہیں برستی،
وہ بارش کچی جھونپڑیوں کا خیال نہیں رکھتی
اور
ہم پھر ایک نئ پر امید صبح کی تلاش میں سرگرداں ہوتے ہیں
کہ
شاید
آنے والی کل کا موسم ایک خوشگوار موسم ہو
لیکن
اب کی بار ابر آلود موسم کی بارشیں شاید ہمارے دلوں کے گھروں کو بھی پہنچیں
اور
جیسے خزاں رسید پتے بارش کے بعد اکثر ہرے ہو جاتے ہیں
تو
میرا خیال ہے کہ یہ بارش موسم کا خیال رکھے گی،
کیونکہ
دلوں کے موسموں کا خیال رکھنا پڑتا ہے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer