زمینِ چشمِ نم میں ہم کو تیرا خواب بونا تھا

Verses

زمینِ چشمِ نم میں ہم کو تیرا خواب بونا تھا
تیری ہر یاد کا موتی تو پلکوں میں پرونا تھا

ملن کے موسموں میں جانے کیوں میں بھول بیٹھی تھی
تجھے بھی شہر کی اس بھیڑ میں اے دوست کھونا تھا

گرا ہے تو کئی ٹکڑوں میں وہ بکھرا پڑا ہوگا
تمہارے گیلے ہاتھوں میں جو شیشے کا کھلونا تھا

نہ جانے وقت نے یہ فاصلے کیوں دے دیئے ورنہ
تمہی تو میرے جیسے تھے، تمہیں تو میرا ہونا تھا

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer