waqte mushkil mein bhee honto per hansi achchi lagee

Verses

غزل اقبال رضوی " شارب"

وقت مشکل میں بھی ہونٹوں پر ہنسی اچّھی لگی
میرے خالق کو میری یہ بندگی اچّھی لگی

ڈھو رہا تھا بس یونہی میں آج تک اپنا وجود
تم سے مل کر مجھکو اپنی زندگی اچھی لگی

بس لہازن پھینک کر سگریٹ کنارے ہو گیا
مجھکو نسل نو کی یہ شرمندگی اچّھی لگی

لب تمہارے میر کی "اس پنکھڑی" کے مِثل ہیں
اس لئے مجھکو میری تشنلبی اچّھی لگی

صورت -و سیرت کا کچھ اتنا حسیں تھا امتزاج
اہل دانش کو میری دیوانگی اچّھی لگی

چند اردو لفظ بھی شامل تهیے جملوں میں ترے
اس لئے شارب انہیں بولی تیری اچّھی لگی

wassalam

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer