Ibn-E-Insha, Insha (1927–1978)

Kalam By Sarfaraz Sultani

Verses

khoob Dekha Hoon rangey Duniya Main
Khud Tamashayiy Khud Tamasha Main

Ek Taraf Budhkdhe Ki Pooja Main
Ek taraf Aashiqoun Ka Kaaba Main

Mujh ko Apni Talaash hai Kab Se
Apne Rukh Pe hoo Hoon Shaydaiyah Main

Iss moumiyeh Ko Koun Suljheyeh
Yu Mera Pardha Tera Pardha Main

Naa Bujhe Paiss Deed Ki teri
Toor per jay Ke Tujh Ko Dekha Main

Jaan Deney ki baath aayeh hai
Kiss tarhaa Haq ki Baath Kehta Main

Sarfaraz Unn ka utthgayeha Pardha
Hoo Gayeh Khud hi Mehwae Jalwaa Main.

Kalam By Sarfaraz Sultani

Verses

kalam By. Sarfaraz Sultani mumbai The Great poet of Sufi Qawwali's. Yeh Nazaar mere Pir Ki.

Illalha ki sharaab nazar se pila diya
mai ek gunhagaar tha sufi bana diya
surat main aaygayi surat fakir ki
yeh nazaar meri peer ki

GORME ULFAT KI SAZA DATAIN HAIN TARE Y SHARE K LOGE

Verses

gorme -ulfat ki saza datain ,hain tare -share k loge .  muj ko sholo pe jalty hain tare share k loge kase ayon tary share me mom ka badan le kr ,labon se aag barsate hain tare share k loge.

Geçtiğimiz yerlerde her üç adımda bir gördüğümüz Tabela lar caddeleri renklendiren unsurlardır. Tabela lar caddeleri renklendirirken aynı zamandada insanların aradıkları yerleri bulmalarında son derece yardımcıdırlar. Geçen bir tatil yöresinde gezerken çok renkli, ışıklı çok güzel bir Tabela gördüm ve bayıldım.
Resmini çekeyim şu Tabela nın derken fotoğraf makinemin pili bitmiş ve çekemedim. Önümüzdeki sene gidebilirsem yine aynı şekilde bu Tabela nın resmini çekmeyi planlıyorum kimbilir belki önümüzdeki sene kısmet olur...

زمیں پہ سبزہ لہک رہا ہے، فلک پہ بادل دھواں دھواں ہے

Verses

زمیں پہ سبزہ لہک رہا ہے، فلک پہ بادل دھواں دھواں ہے
مگر جو دل کے مزاج پوچھو، ہمارے دل کا عجب سماں ہے

درونِ سینہ غمِ جدائی کا داغ ہے اور کہاں کہاں ہے
اگر یہی بختِ عاشقاں ہے فغاں ہے اے دوستو فغاں ہے

خراب دل کی خراب باتیں، اداس دن بے قرار راتیں
جو درد ہے دردِ جانستاں ہے جو سوز ہے سوزِ رائیگاں ہے

میں تیری مانند وسعتِ دہر میں اکیلا سا پھر رہا ہوں
فضائے صحرا کے ابرپارے کہیں پہ منزل کا بھی نشاں ہے

نہ قافلہ چاند کا ہویدا، نہ منزلِ نورِ صبح پیدا
وہی گزرگاہِ کہکشاں ہے، وہی غبارِ ستارگاں ہے

نہ ایسے آنے کی آرزو تھی نہ ایسے جانا ہماری خُو تھی
ہمارے دل کی بھی آبرو تھی مگر وہ پہلا سا دل کہاں ہے

تم اس پہ حیراں ہو خوش خیالو، پرانے وقتوں کے نجد والو
وگرنہ ہم کو بھی کچھ گماں ہے، وگرنہ اپنی بھی داستاں ہے

نہ ان کے چہرے کی دھوپ دیکھی نہ ان کے آنچل کی چھاؤں پائی
رتوں سے محروم جا رہے ہیں، عجب نصیبِ بلا کشاں ہے

تم اپنے انشاؔ کی راہ و منزل کو جانتے ہو پھر اس سے مطلب
وہ تنہا تنہا رواں دواں ہے کہ ہمرہِ اہلِ کارواں ہے

سانحہ ہم پہ یہ پہلا ہے مری جاں کوئی؟

Verses

سانحہ ہم پہ یہ پہلا ہے مری جاں کوئی؟
ایسے دامن سے ملاتا ہے گریباں کوئی؟

قیس صاحب کا تو اِس غم میں عجب حال ہوا
اپنے رستے میں نہ پڑتا ہو بیاباں کوئی

ہم نے اپنے کو بہت دیر سنبھالا ہوتا
آ ہی نکلے اگر آنسو سرِ مژگاں کوئی؟

یارو اس دردِ محبت کی دوا بتلاؤ
ڈھونڈ لیں گے غمِ دوراں کا تو درماں کوئی

یک نظر دیکھنا، رم کرنا، ہوا ہو جانا
ان سے چھوٹی ہے بھلا خوئے غزالاں کوئی؟

ہم کسی سمت بھی نکلے ہوں وہیں جا نکلیں
ہم سے بھولی ہے رہ کوچہء جاناں کوئی؟

اب تری یاد میں روئیں گے نہ حیراں ہوں گے
ان سے پیماں ہے کوئی، دل سے ہے پیماں کوئی

سونی راتوں میں سرِ بسترِ خوابِ راحت
بیٹھا رہتا ہے کسی بات پہ گریاں کوئی

بھیگی شاموں میں کھلے صحن میں تنہا تنہا
بیقرارانہ ہی دیکھا ہے خراماں کوئی

دوستو دوستو اس شخص کو جا کر سمجھاؤ
اپنے انشاؔ کے سنبھلنے کا بھی ساماں کوئی

یہ بھی ہم لوگوں کی وحشت پہ ہنسا کرتا تھا
آیا اس خانہء ویراں میں بھی مہماں کوئی

جنگل جنگل شوق سے گھومو، دشت کی سیر مدام کرو

Verses

جنگل جنگل شوق سے گھومو، دشت کی سیر مدام کرو
انشاؔ جی ہم پاس بھی لیکن رات کی رات قیام کرو

اشکوں سے اپنے دل کی حکایت دامن پر ارقام کرو
عشق میں جب یہی کام ہے یارو لے کے خدا کا نام کرو

کب سے کھڑے ہیں برمیں خراجِ عشق لئے سرِ راہگزار
ایک نظر سے سادہ رخو ہم سادہ دلوں کو غلام کرو

دل کی متاع تو لوٹ رہے ہو حُسن کی دی ہے زکوات کبھی؟
روزِ حساب قریب ہے لوگو کچھ تو ثواب کا کام کرو

میرؔ سے بیعت کی ہے تو انشاؔ میرؔ کی تبعت بھی ہے ضرور
شام کو رو رو صبح کرو اب، صبح کو رو رو شام کرو

یُوں تو ہے وحشت جزوِ طبیعت، ربط انہیں کم لوگوں سے

Verses

یُوں تو ہے وحشت جزوِ طبیعت، ربط انہیں کم لوگوں سے
اب تو برس دن بعد بھی انشاؔ ملتے نہیں ہم لوگوں سے

کیوں تجھے ضد ہے وضع نبھائیں، چاند نہ دیکھیں عید کریں
چُھپ نہ سکے گا اے دلِ بریاں دیدہء پرنم لوگوں سے

کیا ہُوا خشت اٹھا دے ماری یا سرِ دامن نوچ لیا
تم تو دوانے اس کے بہانے ہو چلے برہم لوگوں سے

عشق کریں تو جنوں کی تہمت، دور رہیں تو تُو ناراض
اب یہ بتا ہم تجھ سے نبھائیں یا دلِ محرم لوگوں سے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer