ایسی تجلی پڑ جائے جو جلا کر بھسم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Verses

ایسی تجلی پڑ جائے جو جلا کر بھسم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے جذبات نہ رہیں باقی میری ذات کو ختم کر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے چاہیے وہ جذبہ جس میں شامل ہو تیرا جلوہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا وجود مٹا دے مجھے عدم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ کائنات رنگ و بو جس میں رچی ہو تیری خوشبو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے یہی میری آرزو کے مجھے اس میں ضم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا کام ہو صبح شام پڑھتا رہوں تیرا کلام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہو ورد زباں تیرا نام کوئی چائے سر بھی قلم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشکل ہو کیونکر قطعی ممکن ہے شکیل تیرے لئیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیرا مالک مولا اگر تجھ پہ کرم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌ شکیل احمد چوھان
تحریر: 03/10/11

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer