دسمبر کے دنوں کا واقعہ تھا/rafiq sandeelvi

Verses

دسمبر کے دنوں کا واقعہ تھا
میں البم دیکھ کر رونے لگا تھا

گھنے پتوں میں جگنو سو گئے تھے
خمار آنکھوں میں گہری نیند کا تھا

چھما چھم دوسری بارش ہوئی تھی
میں تنہا بالکونی میں کھڑا تھا

گلے ہم مل رہے تھے کہ اچانک
دمامہ کوچ کا بجنے لگا تھا

گلوں کی خوشبوئیں باسی ہوئی تھیں
پھلوں کا ذائقہ پھیکا ہوا تھا

رفیق سندیلوی