Verses

دامنوں کا پتہ ھے نہ گريبانوں کا
حشر کہتے ھيں جسے شہر ھے عريانوں کا

گھر ھے اللہ کاگھر بے سر و سامانوں کا
پاسبانوں کا يہاں کام نہ دربانوں کا

گور کسریٰ و فريدوں پہ جو پہنچوں پوچھوں
تم يہاں سوتے ھو کيا حال ھے ايوانوں کا

کيا لکھيں يار کو نامہ کہ نقاہت سے يہاں
فاصلہ خامہ و کاغذ ميں ھے ميدانوں کا

دل يہ سمجہا جو ترے بالوں کا جوڑا ديکھا
ھے شکنجے ميں يہ مجموعہ پريشانوں کا

موجيں دريا ميں جو اٹھتي ھوئي ديکھيں سمجھا
يہ بھي مجمع ھے تيرے چاک گريبانوں کا

تير پہ تير لگاتا ھے کماندار فلک
خانہ دل ميں ہجوم آج ھے مہمانوں کا

بسملوں کي دم رخصت ھے مدارات ضرور
يار بيڑا تيري تلوار ميں ھو پانو ں کا

ميرے اعصا نے پھنسايا ھے مجہے عصياں ميں
شکوہ آنکھوں کا کروں يا ميں گلہ کانوں کا

قدر داں چاہئے ديوان ھمارا ھے امير
منتخب مصحفي و مير کے ديوانوں کا

Author

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer