خلا میں جست بھرنا جانتا تھا/rafiq sandeelvi

Verses

خلا میں جست بھرنا جانتا تھا
مگر میں پہلے زینے پر کھڑا تھا

مجھے اڑنے کی شکتی مل گئی تھی
مگر مین پیٹ کے بل رینگتا تھا

ہزاروں اونٹ میری ملکیت تھے
مگر میں پا پیادہ چل رہا تھا

مرے احکام کی تابع تھیں نیندیں
مگر میں تھا کہ شب بھر جاگتا تھا

خطابت گو مرے گھر کی تھی لونڈی
مگر میں ٹوٹے جملے بولتا تھا

رفیق سندیلوی