Verses

ان شوخ حسينوں پہ مائل نہيں ہوتا
کچھ اور بلا ھوتی وہ دل نہيں ہوتا

کچھ وصل کے وعدے سے بھی حاصل نہيں ہوتا
خوش اب تو خوشی سے بھی ميرا دل نہيں ہوتا

گردن تن بسمل سے جدا ہوگئی کب سے
گردن سے جدا خنجر قاتل نہيں ہوتا

دنيا ميں پري زاد دئيے خلد ميں حوريں
بندوں سے وہ اپنے کبھي غافل نہيں ہوتا

دل مجھ سے ليا ھے تو زرا بولئیے ھنسئے
چٹکی ميں مسلنے کے لئے دل نہيں ہوتا

عاشق کے بہل جانے کو اتنا بھی ھے کافی
غم دل کا تو ھوتا ھے اگر دل نہيں ہوتا

فرياد کروں دل کےستانےکي اسی سے
راضی مگراس پر بھي مير ادل نہيں ہوتا

مرنے کے بتوں پر يہ ھوئی مشق کہ مرنا
سب کہتے ھيں مشکل، مجھے مشکل نہيں ہوتا

جس بزم ميں وہ رخ سے اٹھا ديتے ھيں پردہ
پروانہ وہاں شمع پہ مائل نہیں ہوتا

کہتے ھيں کہ تڑپتے ھيں جو عاشق دل کے
ہوتا ھے کہاں درد اگر دل نہيں ہوتا

يہ شعر وہ فن ھے کہ امير اس کو جو برتو
حاصل يہي ہوتا ھے کہ حاصل نہيں ہوتا

Author

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer