بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

Verses

بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

ہم تم کو یوں آزمائيں گے کسی دن
بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

یوں تو آوارگی کا سفر جاری ہے
سوچا ہےگھر جائيں گے کسی دن

ہر قدم پر گناہ کرنے والے سن لیں
گھڑے پاپ کے بھر جائيں گے کسی دن

اگر ظالم تیری بے رخی جاری رہی
راہ میں تجھ سے بچھڑ جائيں گے کسی دن

گر دیکھنا ہے معجزہ محبت دنیا کو
سفینے ڈوبتے بھی ابھر جائيں گے کسی دن

عثمان کو آزمانے والے سن لیں اب
ہم ہر حد سے گزر جائيں گے کسی دن

Shehr e qalandari men ash o israt ka koi muqam nahi

Verses

SHEHR E QALANDARI MEN ASH O ISHRAT KA KOI MUQAM NAHI. MAGAR HOSN E SADGI KA DOR E HAZAR MEN NAM NAHI. TALAWAT E QURAN HAI LAZIM MAGAR GHOR O FIKAR KA NAM NAHI. BAZAHIR HAIN HUM SURAT E MOMIN' PAR BATIN MUSALMAN NAHI. KHOWAHISHAT E NAFS HAI TAARI' PAR TAQWA KA NAM NAHI. GUNAHON KA HAI TASALSUL PAR TUBA O ASTAGHFAR AAM NAHI. RAAH E HAQ PE ROKAWATEN HAZAR' GAR SHAR KI BANDISH AAM NAHI.

Shehr e qalandari men ash o israt ka koi muqam nahi

Verses

SHEHR E QALANDARI MEN ASH O ISHRAT KA KOI MUQAM NAHI . MAGAR HOSN E SADGI KA DOR E HAZIR MEN NAM NAHI . TALAWAT E QURAN HAI LAZIM, PAR GHOR O FIKAR KA NAM NAHI. BAZAHIR HAIN HUM SURAT E MOMIN' PAR BATIN MUSALMAN NAHI. KHOWAHISHAT E NAFS HAI TAARI' PAR TAQWA KA NAM NAHI. TAN O IMAN FAROSHI HAI AAM' MAGAR US PAR KOI ROK THAM NAHI. GUNAHON KA HAI TASALSUL' PAR TUBA O ASTAGFAR KA NAM NAHI. RAAH E HAQ PE ROKAWATEN HAZAR' GAR SHAR KI BANDISH AAM NAHI.

Lab Pe Aati Hai Dua Banke Tamanna Meri

prayer lab pe aati hai dua by deeraf4444
[ vid eo:http://youtu.be/ffH5aS5d53U autoplay:0]

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری
زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری

دور دنیا کا میرے دم سے اندھیرا ہو جاے
ہر جگہ میرے چمکنے سےاجالا ہو جاے

ہو میرے دم سے یونہی میرے وطن کی زینت
جس طرح پھول سے ہوتی ہے چمن کی زینت

زندگی ہو میری پروانے کی صورت یا رب
علم کی شمع سے ہو مجھ کو محبت یا رب

ہو میرا کام غریبوں کی حمایت کرنا
درد مندوں سے ضعیفوں سے محبت کرنا

میرے اللہ برائی سے بچانا مجھ کو
نیک جو راہ ہو اس راہ پہ چلانا مجھ کو

Lab pe aati hai dua ban kay tamana meri
Zindagi sham’a key surat ho Khudaya meri.

Dur dunya ka maray dam say andheera ho jaye!
Har jagah meray chamaknay say ujala ho jaye!

Ho maray dam say younhi meray watan key zeenat
Jis tarah phool say hoti hai chaman ki zenat.

Zindgi hoo maray parwanay key surat Ya Rab!
Ilm ki sham’a say ho mujko muhabat Ya Rub!

Ho mara kaam ghareeboon key himayat kerna
Dard mandoon say za’ieefoon say muhabbat karna.

Maray Allah! burai say bachana mujhko
Naik jo rah hoo us raah pay chalana mujh ko.

Lub pay aati hai dua baan key tamana mayri
Zindagee shama ki surat ho Khudaya meree.

اِسی لیے مرا سایہ مجھے گوارا نہیں

Verses

اِسی لیے مرا سایہ مجھے گوارا نہیں
یہ میرا دوست ہے لیکن مرا سہارا نہیں

یہ مہر و ماہ بھی آخر کو ڈوب جاتے ہیں
ہمارے ساتھ کسی کا یہاں گذارا نہیں

ہر ایک لفظ نہیں تیرے نام میں شامل
ہر ایک لفظ محبت کا استعارہ نہیں

تمہی سے چلتے ہیں سب سلسلے تعلق کے
وہ اپنا کیسے بنے گا کہ جو ہمارا نہیں

اور اب برہنگی اپنی چھپاتا پھرتا ہوں
مرا خیال تھا میں خود پہ آشکارا نہیں

ابھی میں نشۂ لاحاصلی میں رہتا ہوں
ابھی یہ تلخئ دنیا مجھے گوارا نہیں

لیے تو پھرتا ہوں آنکھوں میں ناتمام سا نقش
اُسے مٹاؤں گا کیسے، جسے ابھارا نہیں

زمیں کا حُسن مکمل نہ ہو سکا تابش
کہیں چراغ نہیں ہے، کہیں ستارہ نہیں

ہاتھ اٹھائے ہیں مگر لب پہ دعا کوئی نہیں

Verses

ہاتھ اٹھائے ہیں مگر لب پہ دعا کوئی نہیں
کی عبادت بھی تو وہ ، جسکی جزا کوئی نہیں

آ کہ اب تسلیم کر لیں تو نہیں تو میں سہی
کون مانے گا کہ ہم میں بے وفا کوئی نہیں

وقت نے وہ خاک اڑائی ہے کہ دل کے دشت سے
قافلے گزرے ہیں پھر بھی نقشِ پا کوئی نہیں

خود کو یوں‌ محصور کر بیٹھا ہوں اپنی ذات میں
منزلیں چاروں طرف ہیں راستہ کوئی نہیں

کیسے رستوں سے چلے اور یہ کہاں پہنچے فراز
یا ہجومِ دوستاں تھا ساتھ ۔ یا کوئی نہیں

ہم جنس اگر ملے نہ کوئی آسمان پر

Verses

ہم جنس اگر ملے نہ کوئی آسمان پر
بہتر ہے خال ڈالیے ایسی اُڑان پر

آ کر گرا تھا ایک پرندہ لہو میں تر
تصویر اپنی چھوڑ گیا ہے چٹان پر

پوچھو سمندروں سے کبھی خاک کا پتہ
دیکھو ہوا کا نقش کبھی بادبان پر

یارو میں اس نظر کی بلندی کو کیا کروں
سایہ بھی اپنا دیکھتا ہوں آسمان پر

کتنے ہی زخم ہیٕ مرے اک زخم میں چھپے
کتنے ہی تیر آنے لگے اِک نشان پر

جل تھل ہوئی تمام زمیں آس پاس کی
پانی کی بوند بھی نہ گری سائبان پر

ملبوس خوشنما ہیں مگر جسم کھوکھلے
چھلکے سجے ہوں جیسے پھلوں کی دکان پر

سایہ نہیں تھا نیند کا آنکھوں میں دور تک
بکھرے تھے روشنی کے نگیں آسمان پر

حق بات آکے رک سی گئی تھی کبھی شکیب
چھالے پڑے ہوئے ہیں ابھی تک زبان پر

برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا

Verses

برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا
اب ذہن ميں نہيں ہے پر نام تھا بھلا سا

ابرو کھنچے کھنچے سے آنکھيں جھکی جھکی سی
باتيں رکی رکی سی لہجہ تھکا تھکا سا

الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر ميں تھے
بن جائے جنگلوں ميں جس طرح راستہ سا

خوابوں ميں خواب اُسکے يادوں ميں ياد اُسکی
نيندوں ميں گھل گيا ہو جيسے رَتجگا سا

پہلے بھی لوگ آئے کتنے ہی زندگی ميں
وہ ہر طرح سے ليکن اوروں سے تھا جدا سا

اگلی محبتوں نے وہ نا مرادياں ديں
تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا

کچھ يہ کہ مدتوں سے ہم بھی نہيں تھے روئے
کچھ زہر ميں بُجھا تھا احباب کا دلاسا

پھر يوں ہوا کے ساون آنکھوں ميں آ بسے تھے
پھر يوں ہوا کہ جيسے دل بھی تھا آبلہ سا

اب سچ کہيں تو يارو ہم کو خبر نہيں تھی
بن جائے گا قيامت اک واقع ذرا سا

تيور تھے بے رُخی کے انداز دوستی کے
وہ اجنبی تھا ليکن لگتا تھا آشنا سا

ہم دشت تھے کہ دريا ہم زہر تھے کہ امرت
ناحق تھا زعم ہم کو جب وہ نہيں تھا پياسا

ہم نے بھی اُس کو ديکھا کل شام اتفاقا
اپنا بھی حال ہے اب لوگو فراز کا سا

ہر لمحہ تخیل کا حسیں ہوتا ہے

Verses

ہر لمحہ تخیل کا حسیں ہوتا ہے

بھٹکا ہوا جنت میں مکیں ہوتا ہے

کیسے مانوں کہ ترے ساتھ تھا وہ آج
وہ تو ہر وقت مرے پاس یہیں ہوتا ہے

زمانے میں کوئی اس کا کلیہ ہی نہیں
بھا جائے جو دل کو وہ حسیں ہوتا ہے

مسکان بھی رہتی ہے سدا ہونٹوں پہ اور
ہر وقت ہی دکھ میرا قریں ہوتا ہے

بدلتے ہی خود مجھے آکر وہ ملے گا
دو جمع دو پانچ کہیں ہوتا ہے

اسی وقت ہی ہارا جو بلبل نے کہا یہ
گل دیکھ مرا خاک نشیں ہوتا ہے

حسن مٹی میں ملتا ہے سنا ہے یہ عمر
جانے اور کیا کیازیرِ زمیں ہوتا ہے